Home / Uncategorized / امریکی فضائیہ کا ’دادا‘کہلانے والا بمبار52طیارہ گر کر تباہ
امریکی فضائیہ کا ’دادا‘کہلانے والا بمبار52طیارہ گر کر تباہ

امریکی فضائیہ کا ’دادا‘کہلانے والا بمبار52طیارہ گر کر تباہ

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک)امریکی فضائیہ کا داد کہلانے والا بمبار طیارہ بی 52بحرالکاہل میں گوام جزیر ے پر واقع امریکی اڈے میں گر کر تباہ ہو گیا جبکہ اس پر سوار عملہ کے 7افراد محفوظ رہے ہیں۔انتظامیہ کے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے  کہ عوام یقین رکھیں کہ یہ بظاہر کوئی حملہ نہیں تھا۔
خیال رہے کہ بیسویں صدی کے سب سے زیادہ خطرناک بمبار طیارے بی 52 کی افادیت 60 سال بعد بھی اتنی ہی ہے جتنی 1962 میں تھی۔اس جہازکے بارے میں خیال ہے کہ یہ 2044 تک امریکی فضائیہ کا حصہ رہے گا۔
یہ بمبار طیارہ 1960 میں تیار کیا گیا تھا۔ دو سال بعد 1962 میں ایٹمی ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھنے والا آخری بی 52 تیار کیا گیا اور اس نے8 انجن سٹارٹ کیے اور امریکہ اور روس کے درمیان کیوبن میزائل بحران میں اپنا کردار ادا کرنے کے لیے اڑان بھری۔
آدھی صدی کے بعد اس جہاز نے ویت نام جنگ، دو عراق اور ایک افغانستان کی جنگوں میں حصہ لیا ہے۔ لیکن اب امریکی فضائیہ کے اس پرانے طیارے پر بڑھاپے کے آثار نمودار ہونے لگے ہیں۔لیکن اب بھی یہ بمبار طیارے امریکہ کی فضا میں اڑان بھرتے ہیں۔

یہ جہاز میدان جنگ میں سب سے پہلے پہنچتا ہے۔ اس کا کام رکاوٹیں ہٹانا ہے تاکہ گیگر جہاز آ کر اپنا کام آسانی سے کر سکیں۔
رکاوٹیں ہٹانے والا یہ بمبار طیارہ 159 فٹ لمبا، اس کے پر 185 فٹ کے ہیں اور اس میں پانچ افراد سوار ہوتے ہیں۔
بی 52 طیارہ 650 میل فی گھنٹہ کی رفتار سے 50 ہزار فٹ کی بلندی پر اڑتا ہے جبکہ عام مسافر طیارہ 35 ہزار فٹ کی بلندی تک جاتا ہے۔ بی 52 بمبار پر 70 ہزار پاونڈ وزنی ہتھیار لادے جاتے ہیں جن میں سینکڑوں روایتی ہتھیار اور 32 جوہری کروز میزائل شامل ہیں۔

Comments are closed.

Scroll To Top