Home / Uncategorized / ایک کام جو اکثر لوگ کرتے ہیں، اس آنکھ میں سوراخ کا باعث بن گیا، جانئے اور ہمیشہ احتیاط کریں
ایک کام جو اکثر لوگ کرتے ہیں، اس آنکھ میں سوراخ کا باعث بن گیا، جانئے اور ہمیشہ احتیاط کریں

ایک کام جو اکثر لوگ کرتے ہیں، اس آنکھ میں سوراخ کا باعث بن گیا، جانئے اور ہمیشہ احتیاط کریں

13152792_1690032324584797_1268600864_n

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) اگرچہ ہم سبھی جانتے ہیں کہ سورج کو براہ راست دیکھنے سے گریز کرنا چاہیے کیونکہ اس سے آنکھوں کو نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہوتا ہے، خاص طور پر دوربین سے تو سورج کو دیکھنے کی غلطی کبھی نہیں کرنی چاہیے، مگر ہم میں سے اکثر کو سورج کو براہ راست دیکھنے سے آنکھوں کو پہنچنے والے شدید نقصان کا اندازہ نہیں۔ اب ایک برطانوی ماہر فلکیات نے تجربے سے ثابت کر دیا ہے کہ سورج کو براہ راست دیکھنے سے آنکھوں کی بینائی شدید متاثر ہوتی ہے اور دوربین سے دیکھنا مزید خطرناک ہے کیونکہ اس سے آنکھیں جل کر ناکارہ ہو جاتی ہیں۔
برطانوی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق ماہر فلکیات مارک ٹامپسن نے ایک ایک تجربہ کیا ہے۔ اس نے دوربین کا رخ سورج کی طرف کرکے سو¿ر کی ایک آنکھ لی اور اسے ٹیلی سکوپ کے عدسے کے سامنے کر دیا، بالکل اسی زاوئیے میں جیسے ٹیلی سکوپ سے ہم دیکھتے ہیں۔ آپ جان کر حیران ہوں گے کہ محض 20سیکنڈ کے وقت میں آنکھ سے دھواں اٹھنا شروع ہو گیا اور وہ جلنے لگی۔ مارک ٹامپسن دکھاتا ہے کہ سو¿ر کی اس آنکھ کے کورینا میں جلنے سے ایک سوراخ جبکہ ریٹینا پر ایک سیاہ نقطہ بن جاتا ہے۔
رپورٹ کے مطابق اگلے ہفتے سیارہ عطارد سورج کے سامنے سے گزرے گا، سورج کے سامنے سے گزرتے ہوئے وہ ایک سیاہ نقطے کی شکل میں ہو گا۔ اس وقت وہ زمین کے قریب ترین ہو گااس لیے بہت سے لوگ عطارد کا قریب سے نظارہ کرنے کے لیے تیاریاں کر رہے ہیں اور دوربینوں کا اہتمام کرنے میں لگے ہوئے ہیں۔ مارک ٹامپسن کے یہ تجربہ کرنے اور پھر اس کی ویڈیو جاری کرنے کا مقصد یہ ہے کہ لوگوں کو سورج کے سامنے سے گزرتے ہوئے عطارد کو دوربین کے ذریعے دیکھنے سے باز رکھا جا سکے کیونکہ اس طرح ان کی آنکھوں کو شدید نقصان پہنچنے کا خدشہ ہے۔

Comments are closed.

Scroll To Top