Home / Uncategorized / ’’بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی مشکل میں پھنس گئے ‘‘سینٹرل انفارمیشن کمیشن نے بی اے اور ایم اے کی ڈگریوں کی تصدیق کا حکم دے دیا

’’بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی مشکل میں پھنس گئے ‘‘سینٹرل انفارمیشن کمیشن نے بی اے اور ایم اے کی ڈگریوں کی تصدیق کا حکم دے دیا

13090235_1687536978167665_1004654400_n

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک)نئی دہلی کے وزیر اعلیٰ ارویند کیجریوال کی جانب سے لکھے گئے خط کے بعد بھارتی سینٹرل انفارمیشن کمیشن نے دہلی یونیورسٹی اور گجرات یونیورسٹی کو ہدائت کی ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی تعلیمی قابلیت اور ڈگریوں کی تصدیق کر کے انہیں ’’پبلک ‘‘کیا جائے تاکہ اس حوالے سے آنے والی تمام درخواستوں کو نبٹایا جاسکے ۔

بھارتی نجی چینل ’’این ڈی ٹی وی ‘‘کے مطابق بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے الیکشن کمیشن میں جمع کرائے گئے حلف نامے میں خود کو دہلی یونیورسٹی سے گرایجویٹ اور گجرات یونیورسٹی سے ماسٹر ڈگری ہولڈر بتا یا تھا ،بھارتی وزیر اعظم کی تعلیمی قابلیت کے حوالے سے ملک بھر میں سوالات اٹھ رہے تھے کہ کیا واقعی نریندر مودی ’’پڑھے لکھے‘‘ ہیں یا پھر انہوں نے اس حوالے سے غلط بیانی کی ہے ،لہذ ا یہ مطالبہ ملک بھر میں زور پکڑتا جا رہا تھا کہِ ان کی ڈگریوں کی تصدیق کرتے ہوئے انہیں ’’عام‘‘کیا جائے ۔بھارتی وزیر اعظم کی ’’تعلیمی قابلیت ‘‘کے حوالے سے اٹھنے والے مطالبات اس وقت شدت اختیار کر گئے تھے جب نئی دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے بھی سینٹرل انفارمیشن کمیشن کو خط لکھ دیا ۔سی آئی سی کو ارویند کیجریوال کی جانب سے لکھے گئے خط میں تحریر کیا گیا تھا کہ مجھے پتا چلا ہے کہ’’ سی آئی سی ‘‘نے وزیر اعظم نریندر مودی کی ڈگریوں کی معلومات کو عام کرنے پر پابندی ایسے وقت میں عائد کی ہوئی ہے ،جب ان پر یہ الزامات لگ رہے ہیں کہ مودی جی کے پاس سرے سے کوئی ڈگری ہے ہی نہیں،ایسے میں پورے ملک کی عوام مودی جی کی ’’تعلیمی قابلیت‘‘کی حقیقت جاننا چاہتی ہے ،لیکن آپ نے ان کی ڈگریوں کی تصدیق اور معلومات کو عام کرنے سے انکار کر کے لوگوں کے جمہوری حق پر پابندی لگائی ہے جو سراسر غلط ہے ۔نئی دہلی کے وزیر اعلیٰ اور عوام کی جانب سے بڑھتے ہوئے پریشر کو مد نظر رکھتے ہوئے سینیٹرل انفارمیشن کمیشن نے دہلی یونیورسٹی اور گجرات یونیورسٹی کو ہدائت کی ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی تعلیمی قابلیت اور ڈگریوں کی تصدیق کر کے انہیں عام کیا جائے ۔یاد رہے کہ اس سے قبل رواں ماہ کے آغاز میں دہلی یونیورسٹی نے وزیر اعظم مودی کی بی اے کی ڈگری سے منسلک معلومات دینے سے انکار کر دیا تھا ،یونیورسٹی کا کہنا تھا کہ ان کے پاس نریندر مودی کے رول نمبر کی تفصیلات نہیں ہیں کیونکہ ڈگری کی تصدیق کے لئے رول نمبر کا ہونا ضروری ہے ۔اس کے علاوہ دہلی کے ایک رہائشی کی طرف سے دائر’’ آر ٹی آئی‘‘ کی وہ درخواست بھی مسترد کر دی گئی تھی، جس میںُ اس نے پوچھا تھا کہ سال 1978 ء میں نریندر مودی نام کے کتنے لوگوں نے خط و کتابت کے ذریعے بی اے پاس کیا تھا؟ تب یونیورسٹی نے قومی سلامتی کے نام پر اس ’’آر ٹی آئی‘‘ کو مسترد کر دیا تھا۔

Comments are closed.

Scroll To Top