Home / Uncategorized / حکومت کا مجوزہ جوڈیشل کمیشن مسترد ،وزیر اعظم نے کمیشن کے نام پر مذاق کیا،معماملہ دبایا تو پھر سڑکوں پر ہوں گے :عمران خان
حکومت کا مجوزہ جوڈیشل کمیشن مسترد ،وزیر اعظم نے کمیشن کے نام پر مذاق کیا،معماملہ دبایا تو پھر سڑکوں پر ہوں گے :عمران خان

حکومت کا مجوزہ جوڈیشل کمیشن مسترد ،وزیر اعظم نے کمیشن کے نام پر مذاق کیا،معماملہ دبایا تو پھر سڑکوں پر ہوں گے :عمران خان

13081687_1685376891717007_1396652659_n

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے حکومت کے مجوزہ جوڈیشل کمیشن کو مسترد کر تے ہوئے کہاہے کہ اگر معاملے کو دبایا گیا تو وہ سڑکوں پر آئیں گے اور ان کے پاس رائے ونڈ جانے کے علاوہ کوئی اور راستہ نہیں ہو گا۔
پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان کا کہناتھا کہ میاں صاحب نے کمیشن کے نام پر مذاق کیاہے ،حکومت جب چاہے اس انکوائری کمیشن کو نوٹیفکیشن سے ختم کر سکتی ہے ،حکومت نے کمیشن کے ٹی آر اوز میں ٹیکس چوری کی شق ہی نہیں شامل کی ، جوڈیشل کمیشن کے اختیارات سول کورٹ سے زیادہ نہیں ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اگر 200لوگوں کی انکوائری ہو گی تو وزیراعظم کی باری کب آئے گی ؟ انکوائری تو پانچ سال تک ختم نہیں ہوگی ۔عمران خان کا کہناتھا کہ حکومت 1956کے قانون کے تحت کمیشن بنا رہی ہے جوکہ کمزور قانون ہے ۔عمران خان نے ایک بار پھر اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اپوزیشن جس کمیشن پر متفق ہے اگر نہ بنائی گئی اورمعاملے کو دبایا گیا تو ان کے پاس رائے ونڈ جانے کے علاوہ کوئی راستہ نہیں ہو گا ، ہمیں مجبوراً سڑکوں پر آنا پڑے گا۔
انہو ں نے کہا کہ حکومتی خط سے ثابت ہو گیا کہ میاں صاحب احتساب سے ڈرتے ہیں ، میاں صاحب تیا ہو جائیں پہلے آ پ کا احتساب ہو گا اس کے بعد میرا ہو گا ۔عمران خان کا کہناتھا کہ وزیراعظم کا نام پاناما لیکس میں آیاہے اس لیے انکوائری بھی سب سے پہلے ان کی ہونی چاہیے باقی سب کی بعد میں ہونی چاہیے ،کاروبار ی شخصیات کے نام ہیں ، ان سے ایف بی آر ڈیل کرے ۔عمران خان نے وزیراعظم نوازشریف سے مطالبہ کرتے ہوئے کہاہے کہ وہ 1990سے لے کر 2013تک اپنی ٹیکس ریٹرن عوام کے سامنے لائیں،جس طرح برطانوی وزیراعظم اپنے پرائم منسٹر بننے کے پہلے سے لے کر اب تک کی پارلیمنٹ کے سامنے پیش کی ہیں ۔حکومت سنجیدہ ہے تو جوڈیشل کمیشن کے ٹی آر اوز اپوزیشن کے ساتھ بیٹھ کر بنانے چاہئے تھے۔

Comments are closed.

Scroll To Top