Home / Uncategorized / ’ خاندان کے لوگوں نے قندیل کے قتل کی منصوبہ بندی کی‘
’ خاندان کے لوگوں نے قندیل کے قتل کی منصوبہ بندی کی‘

’ خاندان کے لوگوں نے قندیل کے قتل کی منصوبہ بندی کی‘

سوشل میڈیا کی سلیبرٹی قندیل بلوچ کے قتل کے مقدمے کی تحقیقات کرنے والی ٹیم کا کہنا ہے کہ اب تک کی تفتیش میں یہ بات سامنے آ رہی ہے کہ قندیل بلو چ کے قتل میں خاندان کے لوگوں نے باقاعدہ منصوبہ بندی کی ہے۔

پنجاب کے جنوبی ضلع ملتان میں قتل ہونے والی قندیل بلوچ کے مقدمے کی تفتیش کرنے والی ٹیم نے اب اس مقدمے میں قندیل بلوچ کے ایک بھائی محمد عارف کو بھی نامزد کیا ہے جو ان دنوں روز گار کے سلسلے میں سعودی عرب میں موجود ہیں۔ اس کے علاوہ قندیل بلوچ کے ایک اور رشتہ دار ظفر کا نام بھی اس مقدمے میں شامل کیا گیا ہے۔

ملزم عارف کو انٹرپول کے ذریعے وطن واپس لانے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے تاہم اس سے پہلے پاکستان میں ان کے خلاف تمام قانونی کارروائیاں مکمل کی جائیں گی جس میں کچھ وقت لگے گا۔

انسپکٹر عطیہ جعفری

ظفر کے بارے میں معلوم ہوا ہے کہ وہ اس وقت پولیس کی تحویل میں ہیں جب کہ ملتان کی پولیس اس کی تردید کرتی ہے۔

پولیس نے اب تک صرف تین افراد کے پولیس کی تحویل میں ہونے کی تصدیق کی ہے جن میں مقتولہ کے بھائی وسیم اور کزن حق نواز شامل ہیں۔ ملزم حق نواز ان دنوں جسمانی ریمانڈ پر پولیس کی تحویل میں ہیں۔

اس مقدمے کی تفتیشی ٹیم میں شامل ایک اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بی بی سی کو بتایا ’عارف اور ظفر کو قندیل بلوچ کے مقدمے میں ملزم وسیم اور حق نواز کے زیر استعمال موبائل ڈیٹا کے ریکارڈ کی روشنی میں نامزد کیا گیا ہے۔‘

اُنھوں نے کہا کہ موبائل فون ریکارڈ کے مطابق قندیل بلوچ کے قتل سے ایک ہفتہ پہلے اور اس واقعہ کے تین روز کے بعد بھی عارف نے حق نواز اور وسیم سے مسلسل رابطے کیے۔

پولیس اہلکار کا کہنا تھا کہ اس کے علاوہ عارف کا اپنے ایک اور رشتے دار ظفر سے بھی مسلسل رابطہ رہا ہے۔

انھوں نے کہا کہ مقتولہ کی بھابیوں اور ملزمان سے اب تک جو تفتیش ہوئی ہے اس میں یہ بات سامنے آ رہی ہے کہ قندیل بلوچ کو قتل کرنے کی پہلے سے منصوبہ بندی کی گئی ہے۔

پولیس اہلکار نے دعوی کیا کہ قتل کے اس مقدمے میں مقتولہ کے والد کو مدعی بنانا بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے تاکہ کسی بھی موقع پر مدعی اس مقدمے میں نامزد ملزمان کو معاف کر سکے۔

واضح رہے کہ پولیس نے اس مقدمے میں غیرت کے نام پر قتل کی دفعہ بھی شامل کی ہے جس کی تحت اب مدعی چاہے بھی تو ملزمان کو معاف نہیں کر سکتا۔

اس مقدمے کی تفتیشی ٹیم میں شامل انسپکٹر عطیہ جعفری نے بی بی سی کو بتایا کہ ملزم عارف کو انٹرپول کے ذریعے وطن واپس لانے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے تاہم اس سے پہلے پاکستان میں ان کے خلاف تمام قانونی کارروائیاں مکمل کی جائیں گی جس میں کچھ وقت لگے گا۔

انھوں نے کہا کہ قندیل بلوچ کے قتل کے مقدمے میں نامزد ملزم اسلم شاہین کو شامل تفتیش کرنے کے لیے متعقلہ حکام کو دوہفتے پہلے خط لکھا جا چکا ہے لیکن ابھی تک تفتیشی ٹیم کو جوابی خط موصول نہیں ہوا اور نہ ہی ملزم تفتیش کے لیے خود پولیس کے سامنے پیش ہوئے ہیں۔

ملزم اسلم شاہین فوج مں نائب صوبیدار ہیں اور وہ اس وقت کراچی میں تعینات ہیں۔

Comments are closed.

Scroll To Top