Home / Uncategorized / عمران کا مطلقہ بیوی کیساتھ گھومنا مناسب نہیں، سمتھ فیملی کیساتھ رشتہ داری سے قبل عمران خان سے دوستی تھی:فضل الرحمان
عمران کا مطلقہ بیوی کیساتھ گھومنا مناسب نہیں، سمتھ فیملی کیساتھ رشتہ داری سے قبل عمران خان سے دوستی تھی:فضل الرحمان

عمران کا مطلقہ بیوی کیساتھ گھومنا مناسب نہیں، سمتھ فیملی کیساتھ رشتہ داری سے قبل عمران خان سے دوستی تھی:فضل الرحمان

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) جمعیت علماءاسلام کے سربراہ مولانافضل الرحمان نے کہاہے کہ عمران خان کامطلقہ بیوی کے ساتھ گھومنا پاکستانی تہذیب پر ڈرون حملہ ہے ، 2002ءمیں عمران خان نے مجھے وزیراعظم کاووٹ دیاتھا، ان سے زبردست دوستی تھی ،ناراضی اس وقت پیدا ہوئی جب انہوں نے ایسے یہودی خاندان میں شادی کی جو اسرائیل کا لابسٹ ہے۔ عمران خان اپنی مطلقہ بیوی کی بانہوں میں بانہیں دال کر گھومتے ہیں جو پاکستانی تہذیب پر ڈرون حملہ ہے،ایسانہیں کرناچاہیے۔
جیونیوزکے پروگرام ’جرگہ‘میں گفتگوکرتے ہوئے مولانافضل الرحمان کاکہناتھاکہ نواز شریف اور آصف زرداری نے مفاہمت خود کرنی ہے، میں صرف دونوں کا مﺅقف ان تک پہنچایا ہے، نواز شریف حکومت کو نہیں بچا رہا جمہوریت کے استحکام کیلئے کام کر رہا ہوں، آصف زرداری اور نواز شریف نے ایک دوسرے کو اچھا ریسپانس دیا ہے ، فی الحال مارشل لاءکا کوئی خطرہ نظر نہیں آرہا ۔وزیراعظم کے خلاف پانامہ لیکس تحقیقات کے دعویداروں کا اپنا دامن صاف نہیں ہے ، ٹی او آرز کو صرف وزیراعظم تک محدود کرنا انصاف کے تقاضوں کے خلاف ہے۔ عمران خان اپنا احتساب کرنے کی بات نہیں کر رہے ، وہ باقی کرپشن چھوڑ کر پانامہ لیکس اور صرف وزیراعظم کو نشانہ بنار ہے ہیں .
مولانافضل الرحمان کاکہناتھاکہ عمرا ن خان ڈرون حملوں کے مخالف نہیں ہیں ،وہ جھوٹ بولتے ہیں، عمران خان سے بھی میری بہت زبردست دوستی تھی، اس زمانے میں سب سے زیادہ پاک و شفاف میں ہی تھا۔ مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ عمران خان اپنی مطلقہ بیوی کی بانہوں میں بانہیں ڈال کر گھومتے ہیں جو پاکستانی تہذیب پر ڈرون حملہ ہے، میرے اعتراض پر عمران خان نے اپنی اصلاح کے بجائے مجھ پر تنقید شروع کر دی، عمران خان کے بچے کس شریعت کے تحت ماں کے پاس ہیں، یہودیت میں اولاد کا نسبی رشتہ ماں کے ساتھ جاتا ہے، عمران خان نے لندن کے میئر انتخابات میں اسرائیل کے حامی یہودی کی حمایت جبکہ پاکستانی مسلمان کی مخالفت کی، عمران خان ڈرون حملوں کے مخالف نہیں ہیں وہ جھوٹ بولتے ہیں جبکہ امریکا مذاکرات کا ڈھونگ رچا کر خود اسے سبوتاژ کر دیتا ہے ۔
انہوں نے کہا کہ پانامہ کے معاملہ پر وزیراعظم نے خود ٹی وی پر آکر جیو ڈیشل کمیشن بنانے کا اعلان کیا، پانامہ تحقیقات کے معاملہ پر اپوزیشن اپنی ہر تجویز سے بھاگتی نظر آرہی ہے ، ٹی وی آرز کو زیادہ بڑا ایشو نہیں بنانا چاہیے، پاکستان میں احتساب کے ادارے موجو دہیں ، پانامہ تحقیقات کا معاملہ سپریم کورٹ کے حوالے کر دیا گیا اب سیاسی بھونچال نہیں پیدا کرنا چاہیے، سپریم کورٹ نے ٹی او آرز کو واضح کرنے کا حکم دیا ہے ، حکومت نے ٹی او آرز واضح کرنے کیلئے اپوزیشن کو ساتھ بٹھالیا ہے، وزیراعظم اپنے آپ کو احتساب کیلئے پیش کر چکے اب اپوزیشن کو آرام سے بیٹھ جانا چاہیے۔
مولانافضل الرحمان نے کہاکہ اپوزیشن کرپشن ختم کرنا نہیں چاہتی کیونکہ کرپشن سب نے کی ہے، عمران خان نے اعتراف کیا کہ آف شور کمپنی ٹیکس بچانے کیلئے رجسٹر کروائی، عمران خان نے 1987 ءمیں پلاٹ کیلئے وزیراعلیٰ کو خط لکھا تھا شوکت خانم ہسپتال کی زمین بھی نواز شریف نے دی ہے ، وزیراعظم کے پاک ہونے کا ایک ہی راستہ ہے کہ وہ پی ٹی آئی میں شامل ہو جائیں، عمران خان سے ذاتی دشمنی نہیں، ایشوز اور نظریات پر اختلاف ہے ،عمران خان پہلے اپنی پاکیزگی ثابت کریں پھر دوسروں پر اعتراض کریں۔

Comments are closed.

Scroll To Top