Home / Uncategorized / وزیراعظم کا سکھر ملتان موٹروے منصوبے کا افتتاح ، چین ، تاجکستان اور ایران تک موٹروے بنانے کا اعلان ، دہشتگرد اور احتجاج کرنیوالے ترقی روکنا چاہتے ہیں: نوازشریف
وزیراعظم کا  سکھر ملتان موٹروے منصوبے کا افتتاح ، چین ، تاجکستان اور ایران تک موٹروے بنانے کا اعلان ، دہشتگرد اور احتجاج کرنیوالے ترقی روکنا چاہتے ہیں: نوازشریف

وزیراعظم کا سکھر ملتان موٹروے منصوبے کا افتتاح ، چین ، تاجکستان اور ایران تک موٹروے بنانے کا اعلان ، دہشتگرد اور احتجاج کرنیوالے ترقی روکنا چاہتے ہیں: نوازشریف

13140605_1690329061221790_257248704_n

سکھر(مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم نوازشریف نے سکھر کے 125سال پرانے پل’لیس ڈاﺅن برج‘ کی تعمیر نو کااعلان کرتے ہوئے کہاکہ لوڈشیڈنگ کے خاتمے کا وعدہ کیا تھا اس وعدے پرقائم ہوں، ایک موٹروے چین، ایک تاجکستان اور ایک ایران تک بھی بنائیں گے ، موٹرویزسے صوبے آپس میں ایک دوسرے سے مل جائیں، دہشتگردوں اور احتجاج کرنیوالوں میں کیا فرق ہے ،دونوں ملک کی ترقی روکنا چاہتے ہیں ، مشرف سمیت بہت سارے لوگوں نے ہم پر کرپشن ثابت کرنے کی کوشش کی،آج بھی کچھ لوگ پاکستان میں بے چینی چاہتے ہیں۔
موٹروے کے افتتاح کے بعد خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نوازشریف نے سکھر کے 125سال پرانے پل کی تعمیر کا اعلان کرتے ہوئے بتایاکہ چھ ارب پچاس کروڑ روپے خرچ آئے گا۔ اُن کاکہناتھاکہ کراچی سے حیدرآبادموٹروےزیرتعمیرہے،کراچی سے حیدرآبادموٹروے اگلے سال مکمل ہوجائےگی،جو 1999 میں ہوااگر نہ ہواہوتاتوآج پاکستان بہت خوش حال ملک بن چکا ہوتا،2013میں دوبارہ موقع ملااورانتہائی تیزی کےساتھ دوبارہ شروع کردیا۔باقی دنیا میں بھی تین ارب لوگ بستے ہیں، اس خطے میں تین ارب لوگ رہتے ہیں،تمام صوبوں میں موٹرویز کا خواب دیکھا تھا،جوپورا ہوتا ہوا نظرآرہا ہے۔
اُن کاکہناتھاکہ مخالفین چاہتے ہیں کہ نوازشریف منصوبے کیوں بنارہے ہیں؟یہ آپ کا ایجنڈا ہے،ہمارا ایجنڈا ہے ملک کی ترقی،آپ کا ایجنڈا نہیں چلے گا،پاکستان کے عوام نے ہمیں یہ مینڈیٹ دیا ہے،دہشتگرد وں اور ایجی ٹیشن کرنے والوں کا ایجنڈا ایک ہے ، دونوں پاکستان کی ترقی کا راستہ روکنا ،افراتفری پھیلانا چاہتے ہیں ،میرا سوال ہے کہ کیا دہشت گردوں اوراحتجاج کرنے والوں میں کوئی فرق ہے؟دونوں پاکستان کی ترقی کا راستہ روکنا چاہتے ہیں، ہم پرآج تک ایک پائی کی کرپشن بھی ثابت نہیں ہوئی۔
وزیراعظم نواز شریف کاکہناتھاکہ ہم کسی قسم کا سمجھوتا کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہیں،لوڈشیڈنگ کے خاتمے کا وعدہ کیا تھا اس وعدے پرقائم ہوں،30 فیصد بجلی سستی ہوگئی ہے، مزید سستی کریں گے،دہشتگرد ترقی روکنا چاہتے ہیں ، جو لوگ سڑکوں اور چوراہوں کو روکنا چاہتے ہیں ان کا ایجنڈا بھی یہی ہے،اگر دھرنوں کی سیاست نہ ہوتی تو یہ منصوبے بہت پہلے شروع ہوچکے ہوتے۔

Comments are closed.

Scroll To Top