Home / Uncategorized / چھوٹو کے بعد پٹ گینگ کے سربراہ عطااللہ نے 3ساتھیوں سمیت ہتھیار ڈال دیئے
چھوٹو کے بعد پٹ گینگ کے سربراہ عطااللہ نے 3ساتھیوں سمیت ہتھیار ڈال دیئے

چھوٹو کے بعد پٹ گینگ کے سربراہ عطااللہ نے 3ساتھیوں سمیت ہتھیار ڈال دیئے

13046187_1685647205023309_267717730_n

لاہور (اے این این) راجن پور میں جاری فوج کے آپریشن کے دوران چھوٹو گینگ سے وابستہ عطااللہ پٹ گینگ کے سربراہ سمیت 4 کارندوں نے فوج کے سامنے ہتھیار ڈال دیئے، جس کے بعد ہتھیار ڈالنے والے گینگسٹرز کی تعداد 17 ہو گئی ۔ پاک فوج اور پنجاب پولیس نے دریائی علاقے کچا جمال کو جرائم پیشہ افراد سے صاف کرنے کے لیے آپریشن کا آغاز کیا تھا۔آپریشن کے 23ویں دن 2 روز قبل چھوٹو گینگ کے سربراہ غلام رسول عرف چھوٹو نے 12 ساتھیوں سمیت فوج کے سامنے ہتھیار ڈالے تھے جبکہ اغوا کیے گئے 24 پولیس اہلکاروں کو بھی رہا کر دیا گیا تھا۔مقامی افراد نے تصدیق کی ہے کہ فوج کی جانب سے گینگسٹرز کے ٹھکانوں پر اب بھی بھاری ہتھیاروں سے شیلنگ کی جا رہی ہے، شیلنگ سے گینگسٹرز کے کئی ٹھکانے تباہ ہو گئے ہیں۔مقامی افراد کے مطابق علاقے میں اب بھی 50 سے زائد گینگسٹرز مزاحمت کر رہے ہیں۔پولیس کے اعلی حکام نے ڈان کو بتایا کہ فوج کے سامنے ہتھیار ڈالنے والوں میں راجن پور کے موضع کچھی عمرانی کے ایک اور گینگ کا سربراہ عطا اللہ پٹ اور اس کے 3 ساتھی شامل ہیں۔حکام کے مطابق چاروں جرائم پیشہ افراد ایک کشتی میں سوار ہو کر فوج کی چیک پوسٹ کے قریب آئے تھے جبکہ ان کی کشتی پر سفید جھنڈا لگا ہوا تھا جو اس بات کی وضاحت تھی کہ وہ ہتھیار ڈالنے آ رہے ہیں۔عطا اللہ کے حوالے سے بتایا گیا کہ وہ بھی اغوا برائے تعاوان کی کئی وارداتوں میں ملوث ہے جبکہ اس کے خلاف بھی راجن پور اور قریبی علاقوں میں کئی مقدمات درج ہیں۔حکام کا کہنا تھا کہ عطا اللہ چھوٹو گینگ کا باقاعدہ رکن نہیں تھا بلکہ وہ 14 اپریل کو پولیس کی فائرنگ سے سربراہ غلام رسول عرف چھوٹو کی ہلاک ہونے والی بھتیجی کی تعزیت کرنے کے لیے اس علاقے میں گیا تھا، لیکن فوج کا آپریشن شروع ہونے کے بعد وہ یہ علاقہ چھوڑنے میں کامیاب نہیں ہو سکا تھا۔دوسری جانب چھوٹو اور اس کے 12 ساتھیوں کو تحقیقات کے لیے اسلام آباد منتقل کیا جا چکا ہے۔

 

Comments are closed.

Scroll To Top