Home / Uncategorized / کشمیریوں کا بھارت کو ایک اور جھٹکا،ٹورنامنٹ میں کرکٹ ٹیموں کے نام مجاہدین سے منسوب
کشمیریوں کا بھارت کو ایک اور جھٹکا،ٹورنامنٹ میں کرکٹ ٹیموں کے نام مجاہدین سے منسوب

کشمیریوں کا بھارت کو ایک اور جھٹکا،ٹورنامنٹ میں کرکٹ ٹیموں کے نام مجاہدین سے منسوب

سری نگر(مانیٹرنگ ڈیسک )کشمیر ی نوجوانوں کے بھارت سے علیحدگی ، پاکستان او ر حریت قائدین سے محبت کے اظہار کے مختلف طریقہ کار سے ہندو سرکار ہمیشہ پریشان رہی ہے۔کشمیریوں کو ان کے موقف سے ہٹانے کیلئے بھارت کی جانب سے تشدد سمیت ہر ممکن راستہ اپنا یا جاتا ہے لیکن کشمیری اپنی آزادی اور حق خودارادی پر سمجھوتہ کرنے کو تیار نہیں ہیں۔حال ہی میں نوجوانوں نے ایک ایسا قدم اٹھایا کہ بھارتی حکمران سر پکڑ کر بیٹھ گئے ۔
برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں حال ہی میں منعقد ہونے والے ایک مقامی کرکٹ ٹورنامنٹ میں حصہ لینے والی بعض ٹیموں کے نام حریت پسند کمانڈرز کے نام پر رکھے جانے کے بعد تنازع کھڑا ہو گیا ہے۔ایک طرف فوج اور مقامی پولیس اس اقدام کے اثرات کے حوالے سے فکر مند ہے تو دوسری جانب حکومت اور اپوزیشن کے درمیان اس بارے میں الزام تراشی شروع ہو گئی ہے۔
متنازع شہید خالد کرکٹ لیگ کا انعقاد جنوبی کشمیر کے ترال میں مقامی کمانڈر برہان کے بھائی کی شہادت کے بعد منعقد کیا گیا تھا۔دو ماہ تک چلنے والے اس کرکٹ ٹورنامنٹ میں 16 ٹیموں نے حصہ لیا۔ یہ ٹورنامنٹ اپریل میں ختم ہوا تھا۔
ٹورنامنٹ کی تین ٹیمیں ایسی تھیں جن کے نام حزب المجاہدین کے کمانڈروں کے نام سے منسوب کردیا۔ کمانڈر برہان وانی کے نام پر ’برہان لائنز‘ جبکہ ایک اور ٹیم کا نام برہان وانی کے شہید بھائی خالد مظفّر وانی کے نام پر ’خالد آرینز‘ رکھا گیا۔یہی نہیں ایک اور ٹیم ’عابد قلندرز‘ کا نام 2014 میں ایک تصادم میں شہید ہونے والے عابد خان کے نام پر رکھا گیا۔
میڈیا کے مطابق کرکٹ ٹیم کا نام شدت پسندوں کے نام پر رکھنے کا یہ چلن اپنے آپ میں نیا ہے۔انگریزی اخبار انڈین ایکسپریس نے ٹورنامنٹ کے آرگنائزر کے حوالے سے بتایا ہے: ’ایسا پہلی بار دیکھنے میں آ رہا ہے کہ ٹیموں کے نام کمانڈروں کے نام پر رکھے جا رہے ہیں۔‘مقامی آن لائن میڈیا پورٹل ’کشمیری میڈیا سروس‘ کا کہنا ہے کہ کرکٹ ٹیم کا نام کمانڈروں کے نام پر رکھنے کا یہ چلن ظاہر کرتا ہے کہ کشمیریان کمانڈرز کو ’کس حد تک چاہتے‘ ہیں۔
انڈین قومی میڈیا کے ایک اور ادارے ’ون انڈیا‘ کا کہنا ہے کہ یہ کشمیر کے لوگوں کی طرف سے جاری ’سول نافرمانی‘ کی طرف ہی ایک اور اشارہ ہے۔
اس معاملے پر ریاست میں سیاست بھی شروع ہو گئی ہے۔ اپوزیشن نے اس کے لیے حکمران پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی (پی ڈی پی) پر الزام لگایا ہے۔نیشنل کانفرنس کے ایگزیکٹو چیئرمین عمر عبداللہ نے کرکٹ ٹیم کا نام کمانڈروں کے نام پر رکھنے کے لیے وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی کو ذمہ دار ٹھہرایا ہے۔ادھر انڈین فوج اور مقامی پولیس نے اس پر اپنی تشویش کا اظہار کیا ہے۔

Comments are closed.

Scroll To Top