Home / Uncategorized / 250 ارب کی جائیدادیں، پاکستانی دبئی میں پراپرٹی کے تیسرے بڑے خریدار بن گئے
250 ارب کی جائیدادیں، پاکستانی دبئی میں پراپرٹی کے تیسرے بڑے خریدار بن گئے

250 ارب کی جائیدادیں، پاکستانی دبئی میں پراپرٹی کے تیسرے بڑے خریدار بن گئے

13141028_1689992017922161_1461674291_n
دبئی (مانیٹرنگ ڈیسک) گزشتہ ایک دہائی سے دبئی میں پراپرٹی کی قیمتیں آسمان کو چھو رہی ہیں لیکن پاکستانی شہری دبئی میں پراپرٹی کے تیسرے بڑے خریدار بن گئے، 250ارب کی جائیدادیں پاکستانیوں کی ملکیت ہیں۔
روزنامہ ایکسپریس ٹربیون کے مطابق جائیدادیں خریدنے والے ممالک میں بھارت کا پہلا اور برطانیہ کا دوسرا نمبر ہے۔ پاکستان دنیا کا تیسرا بڑا ملک ہے جو دبئی میں جائیدادوں کا مالک ہے۔پراپرٹی کے خریداروں کی فہرست میں بھارت پہلے نمبر ہے جس کے شہریوں نے 2015ءمیں 135بلین درہم کی مارکیٹ میں 20بلین درہم سے زائد کی رقم خرچ کی ۔برطانوی خریدار10.8بلین درہم کیساتھ دوسرے جبکہ 8.4بلین درہم کیساتھ پاکستانی تیسرے نمبر پر رہے ، اسی طرح ایران چوتھے ، کینیڈا پانچویں اور روس 2.7بلین درہم کیساتھ چھٹے نمبر پر رہا۔ متحدہ عرب امارات نے 2002ءمیں غیرملکی خریداروں کیلئے سپیشل فری ہولڈزون متعارف کرایاتھا جس کے بعد سے مارکیٹ میں سرمایہ کاروں کی دلچسپی بڑھ گئی ۔
رپورٹ کے مطابق 2008ءمیں قیمتیں اپنے عروج پر تھیں جس کی وجہ بھاری سرمایہ کاری تھی لیکن عالمی معاشی بدحالی کی وجہ سے قیمتیں ایک مرتبہ گراوٹ کا شکار ہوگئیں اور قیمتیں آدھی رہ گئی تھیں ،2012ءاور 2014ءکے درمیان قیمتوں اور کرایوں میں ایک مرتبہ پھر اضافہ دیکھاگیا ۔
ماہرین کے مطابق گزشتہ سال قیمتوں میں اوسط12فیصد کمی دیکھی گئی اورامکان ہے کہ مزید کچھ کمی ہوگی لیکن اتنی زیادہ نہیں ، جتنی کم ہونی تھیں ، ہوچکی ہیں ۔ دبئی کی مارکیٹ اووسیز شہریوں سے چلتی ہے لیکن امریکی ڈالر کے مقابلے میں اماراتی درہم کی قدرمیں کمی ہوئی ہے اور اب اس میں اضافے کی کوشش کی جارہی ہے ، دیگر ممالک کی کرنسی رکھنے والے افراد کیلئے اب دبئی میں پراپرٹی بنانا بہت مہنگاکام ہے ۔

Comments are closed.

Scroll To Top