Home / Uncategorized / الیکشن 2018: جیپ کا نشان،’آپ خود اندازہ کر سکتے ہیں کہ جیپ کون چلائے گا‘
الیکشن 2018: جیپ کا نشان،’آپ خود اندازہ کر سکتے ہیں کہ جیپ کون چلائے گا‘

الیکشن 2018: جیپ کا نشان،’آپ خود اندازہ کر سکتے ہیں کہ جیپ کون چلائے گا‘

پاکستان میں الیکشن کی آمد آمد ہے اور ملک کی دو مقبول ترین جماعتیں، پاکستان مسلم لیگ نون اور پاکستان تحریک انصاف کے انتخابی نشانات کا چرچا تو ہر جانب ہے اور ان کے سیاسی نعرے بھی انھی نشانات کے گرد گھوم رہے ہوتے ہیں۔

کہیں مریم نواز ‘شیر’ کی ٹویٹ کرتی ہیں تو کہیں پی ٹی آئی کے حمایتی ‘ٹھپہ صرف بلے کا’ کے نعرے بلند کرتے ہیں تاکہ وہ ووٹروں کو قائل کر سکیں کہ 25 جولائی کو ان کے انتخابی نشانات پر ٹھپہ لگائیں۔

اسی حوالے سے جب ملک کے سابق وزیر داخلہ اور نواز لیگ کے تاحیات قائد نواز شریف کے 34 برس تک قریبی رفیق چوہدی نثار علی خان نے الیکشن کے لیے اپنی جماعت کا ساتھ دینے سے انکار کرتے ہوئے قومی اسمبلی کے دو حلقوں سے آزاد امیدوار کی حیثیت سے حصہ لینے کا اعلان کیا تو اس کے لیے انھیں الیکشن کمیشن پاکستان کی جانب سے ‘جیپ’ کا نشان الاٹ کیا گیا۔

 

لیکن غور طلب بات یہ تھی کہ چوہدری نثار علی خان اس نشان کو حاصل کرنے والے اکیلے شخص نہیں تھے۔

30 جون کو الیکشن کمیشن کی جانب سے دی گئی امیدواروں کی نامزدگی کی آخری تاریخ آئی تو جنوبی پنجاب سے تعلق رکھنے والے نواز لیگ کے کم از کم چھ مزید امیدواروں نے بھی جماعت کی جانب سے دی گئی ٹکٹیں واپس کر دیں اور آزادانہ طور پر انتخابات لڑنے کا فیصلہ کیا۔

ان تمام امیدواروں کے درمیان قدرِ مشترک: انتخابی نشان ‘جیپ’۔

ملک کے سابق وزیر داخلہ کے علاوہ ‘جیپ’ کا نشان پاکستان مسلم لیگ کے سابق رہنما زعیم قادری کو بھی لاہور میں قومی اسمبلی کی نشست 125 سے الاٹ کر دیا گیا ہے۔ واضح رہے کہ چند روز قبل زعیم قادری نے پارٹی کے رہنماؤں سے اختلافات کے بعد علیحدگی کا فیصلہ اختیار کرتے ہوئے لاہور کے حلقے این اے 125، 133 اور 134 سے آزادانہ طور پر انتخاب لڑنے کا اعلان کیا تھا۔

پاکستانتصویر کے کاپی رائٹAFP

‘جیپ’ کی اچانک پھیلنے والی مقبولیت کے بعد مختلف حلقوں میں چہ مگوئیاں شروع ہو گئیں اور ان میں سب سے واضح آواز مسلم لیگ نواز کے تاحیات قائد، اور تین دفعہ کے وزیر اعظم محمد نواز شریف کی تھی جو اس وقت اپنی بیمار اہلیہ کی تیمارداری کے لیے لندن میں موجود ہیں۔

سوشل میڈیا پر جاری ایک ویڈیو میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے نواز شریف الیکشن سے پہلے کی جانے والی ‘دھاندلی’ کی شکایت کرتے ہیں اور اپنی جماعت کے امیدواروں کو ہراساں کیے جانے اور عدلیہ کی جانب سے نااہل قرار دیے جانے کی تنقید کرتے ہیں۔

Comments are closed.

Scroll To Top